عمران خان نے کمرے میں داخل ہوتے ہی ایسا کیا کام کیا کہ تمام صحافی ہکا بکا رہ گئے

 

دو روز قبل وزیراعظم پاکستان عمران خان کی ملک کے سینئیر صحافیوں کے ساتھ ایک نشست منعقد کی گئی۔جس میں نامور صحافیوں کو مدعو کیا گیا تھا۔۔عمران خان سے ملاقات کے بعد صحافیوں نے ملاقات کا اندرونی احوال بھی بیان کیا۔اسی متعلق معروف صحافی رؤف کلاسرا اپنے ایک کالم ” وزیراعظم سے ایک ملاقات” میں لکھتے ہیں کہ ماضی میں جب بھی عمران خان صحافیوں سے ملتے تھے تو سب سے ہاتھ ملاتے تھے‘ مسکراہٹ اور چند تعریفی جملوں کا تبادلہ ہوتا‘لیکن اس دفعہ وزیراعظم بننے کے بعد عمران خان کمرے میں آئے تو سب صحافی اٹھ کھڑے ہوئے‘ کہ وہ سب سے ہاتھ ملائیں گے کیونکہ یہ روایت تھی‘ تاہم سب حیران ہوئے جب عمران خان کسی سے ہاتھ ملائے بغیر صوفے پر بیٹھ گئے اور ہم سب ایک دوسرے کا منہ دیکھتے رہے۔ وزیراعظم کے ساتھ وزیراطلاعات فواد چوہدری اور وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی بھی بیٹھ گئے۔ عمران خان نے بیٹھتے ہی کاشف عباسی کو کہا: جی کاشف پوچھیں۔توقع تھی وزیراعظم پہلے کچھ تمہید باندھیں گے اور پھر وہ سوالات پوچھیں گے‘تاہم اس روٹین کو توڑ کروزیراعظم نے براہ راست صحافی سے سوال کیا۔یاد رہے عمران خان نے صحافیوں سےب ملاقات کے دوران کہا تھا کہاب میں صرف انہی ممالک کا درورہ کروں گا جس کا پاکستان کو فائدہ ہو۔ انہوں نے کہا کہ نواز شریفنے بیرون ملک دوروں پر اربوں روپے خرچ کیے۔۔وزیراعظم سے وزیراعلی پنجاب سے متعلق بھی بات کی گئی تو انہوں نے کہا کہ سردار عثمان بزدار دلیر آدمی ہیں۔ عمران خان نے کھل کر وزیراعلی پنجاب کی حمایت کی اور جب ڈی پی او پاکپتن کا معاملہ زیر بحث آیا تو عمران خان نے کہا کہ تمام حقائق سپریم کورٹ میں سامنے آ جائیں گے۔ انہوں نے ہیلی کاپٹر والے معاملے پر کہا کہ اگر ہیلی کاپٹر کھڑا رہا تو یہ خراب ہو جائے گا میں صرف ہفتے میں دو بار اس کا استعمال کرتا ہوں۔میں اس لیے سڑک کے راستے نہیں جاتا کیونکہ مجھے سیکیورٹی اداروں نے خبردار کیا ہے اس لیے میں عوام کو مسائل سے بچانے کے لیے ہیلی کاپٹر کا سفر کرتا ہوں۔انہوں نے کہا کہ اب کوئی سفارش نہیں چلے گی۔احتساب شروع ہونے پر لوگ کہیں گے کہ جمہوریت خطرے میں ہے لیکن ہم احتساب کا عمل جاری رکھیں گے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *